Connect with us

دنیا

کیا لبنان اور اسرائیل جنگ کے دہانے پر ہیں؟

اسرائیل

کیا لبنان اور اسرائیل جنگ کے دہانے پر ہیں؟

تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ اسرائیل لبنانی گروپ حزب اللہ کے خلاف ہر طرح کی جنگ کی دھمکی دے رہا ہے، جو دونوں ممالک کے لیے تباہ کن ثابت ہو سکتا ہے۔

اسرائیل اور لبنانی گروپ حزب اللہ کے درمیان کشیدگی اور حملے بڑھتے جا رہے ہیں۔

8 اکتوبر سے حزب اللہ نے اسرائیل کو غزہ پر اسرائیل کی جنگ میں رکاوٹ ڈالنے کے لیے ایک نچلی سطح کے تنازعے میں شامل کر رکھا ہے، جس میں اب تک 36,000 سے زیادہ افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

سرحد کے دونوں طرف کے دیہاتوں سے عام شہریوں کو نکال لیا گیا ہے۔ اسرائیل نے لبنانی دیہاتوں کو سفید فاسفورس سے نشانہ بنایا ہے جبکہ حزب اللہ نے اسرائیلی فوجی تنصیبات کو ڈرون، گائیڈڈ میزائل اور دیگر ہتھیاروں سے نشانہ بنایا ہے۔

امریکی صدر جو بائیڈن کی جانب سے غزہ میں جنگ بندی پر زور دیتے ہوئے گزشتہ ہفتے کے دوران دونوں فریقوں نے حملے تیز کر دیے ہیں۔

یہاں آپ کے بارے میں جاننے کی ضرورت ہے کہ آیا حزب اللہ اور اسرائیل جنگ میں جائیں گے۔

حزب اللہ کون ہے؟

حزب اللہ ایک شیعہ گروپ ہے جو پہلی بار اسرائیل کے جنوبی لبنان پر 18 سالہ قبضے کا مقابلہ کرنے کے لیے ابھرا، جس کا آغاز 1982 میں ہوا۔

اسرائیلی اور علاقائی سلامتی کے ماہرین کے مطابق، ایران کی حمایت سے حزب اللہ اسرائیل کے لیے سب سے بڑا فوجی خطرہ ہے۔

حزب اللہ نے اسرائیل کی طرف سے ہر قسم کے حملے کا مقابلہ کیا اور اس کے بعد سے صرف مضبوط ہوا ہے۔

حزب اللہ اور اسرائیل کیوں متضاد ہیں؟

لبنان پر قبضے کے خاتمے کے بعد اسرائیل اور حزب اللہ کے تعلقات کشیدہ رہے۔

حزب اللہ نے 2006 میں اسرائیلی فوجیوں پر گھات لگا کر حملہ کر کے تین کو ہلاک اور دو کو اغوا کر لیا۔

اسرائیل نے جوابی کارروائی کرتے ہوئے لبنان کے خلاف جنگ شروع کی اور دارالحکومت بیروت تک پہنچ گئی۔

وہاں اسرائیل نے بیروت کے پڑوس میں حزب اللہ کے کنٹرول کے نام پر اپنا دحیہ نظریہ استعمال کیا جس میں شہری بنیادی ڈھانچے کو نشانہ بنانا شامل ہے۔

یہ جنگ 34 دن تک جاری رہی جس میں 1,901 لبنانی ہلاک اور 900,000 بے گھر ہوئے۔ تقریباً 165 اسرائیلی مارے گئے۔ تاہم حزب اللہ تباہ نہیں ہوئی۔

اس گروپ نے اس کے بعد سے زیادہ جدید ترین ہتھیار اور تجربہ جمع کیا ہے کیونکہ اس نے ملک کی جنگ کے دوران شامی حکومت کے ساتھ مل کر لڑا تھا، جہاں اس پر شامی شہریوں کے خلاف جنگی جرائم کا ارتکاب کرنے کا الزام تھا۔

کسی بڑے تصادم کا خدشہ کیوں ہے؟

کیونکہ اسرائیل بالکل وہی دھمکی دیتا نظر آتا ہے۔
5 جون کو حزب اللہ نے ایک اسرائیلی گاؤں میں دو خودکش ڈرون فائر کیے جس میں دو افراد ہلاک اور 11 زخمی ہوئے۔

اسرائیلی فائر فائٹرز بھی حزب اللہ کے حملوں سے لگنے والی تقریباً آگ بجھانے کے لیے پہنچ گئے۔

اس کے بعد اسرائیل کے وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے کہا کہ اسرائیل لبنان کے ساتھ اپنی سرحد پر انتہائی کشیدہ کارروائی کے لیے تیار ہے۔

اسرائیل کے انتہائی دائیں بازو کے قومی سلامتی کے وزیر نے شمال میں آگ کی زد میں آنے والے کچھ علاقوں کا دورہ کیا اور بعد میں صحافیوں کو بتایا کہ یہ ناقابل قبول ہے کہ ہمارے ملک کے کسی علاقے کو نشانہ بنایا جائے جبکہ لبنان خاموش ہے۔ ہمیں حزب اللہ کی تمام چوکیوں کو جلا دینا چاہیے انہیں تباہ کر دیں۔

اسرائیل کی بیان بازی کے باوجود، لبنانی امریکن یونیورسٹی میں سیاسیات کے ایک ایسوسی ایٹ پروفیسر عماد سلامی کو یقین نہیں ہے کہ اسرائیل کا حملہ قریب ہے۔

اسرائیل کو علاقائی سلامتی کے خطرات اور اندرونی سیاسی حرکیات سمیت متعدد محاذوں پر اہم چیلنجز کا سامنا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ حملے کے نتیجے میں ممکنہ طور پر بین الاقوامی سطح پر شدید مذمت اور اہم اتحادیوں خاص طور پر امریکہ کے ساتھ تعلقات کشیدہ ہوں گے جو حمایت کو پیچیدہ کر دے گا۔

ایک اسرائیلی مبصر اور سیاسی تجزیہ کار ڈاہلیا شینڈلن کے مطابق انہیں خدشہ ہے کہ حزب اللہ اسرائیلی فوجی چوکیوں اور کمیونٹیز پر حملہ کرے گی جیسا کہ حماس نے 7 اکتوبر کو کیا تھا۔

لبنان
Continue Reading
Click to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *